25 کروڑ سال پرانی سمندری مخلوق کی دریافت، خبر نے سب کے ہوش اُڑا دیئے

سمندری ماہرین نے شارک مچھلی کی ایک ایسی نسل دریافت کی ہے جو سمندرمیں 25 کروڑ سال پہلے سے موجود ہے مگراب پہلی باراسے ڈھونڈا گیا ہے۔اٹلانٹک سکس گل نامی شارک کی یہ قسم سمندروں میں ڈائنا سار کے زمانے سے بھی پہلے کی موجود ہے۔ فلوریڈا انسٹیٹوٹ آف ٹیکنالوجی کے محققین نے اس شارک کے ڈی این اے کا تجزیہ کرکے یہ دریافت کیا ہے کہ یہ مچھلی دیگر شارک مچھلیوں سے مختلف ہے جو کہ بحرہند اور بحر اوقیانوس –> میں پائی جاتی ہیں۔یہ مخلوق لگ بھگ 25 کروڑ سال پہلے سے اب تک موجود ہے۔عالمی جریدے جرنل مرین بائیوڈائیورسٹی میں شائع ہونے والی معلومات کے مطابق یہ شارک مچھلی چھ فٹ لمبی ہوسکتی ہے اور دیگر شارک مچھلیوں سے بہت چھوٹی ہوتی ہے۔

جن کی لمبائی پندرہ فٹ یا اس سے زائد ہوسکتی ہے۔ ان کے منفرد آری جیسے نچلے دانت اور سکس گل سلیٹس کو دیکھ کر انہیں اٹلانٹک سکس گل شارک کا نام دیا گیا ہے۔ محققین کا خیال تھا کہ یہ بھی شارک کی ایک نسل ہے۔ تاہم جب ڈی این اے کا تجزیہ کیا گیا تو انکشاف ہوا کہ یہ ان نسلوں سے مطابقت نہیں رکھتا جن کا تجزیہ پہلے ہوچکا ہے۔محققین کا کہنا تھا کہ تجزیے سے ثابت ہوگیا ہے کہ نو دریافت شدہ شارک مچھلی دیگر نسلوں سے بالکل مختلف ہے۔ دیکھنے میں یہ سب مچھلیاں ایک جیسی ہی لگتی ہیں۔ درحقیقت یہ زمین پر پائے جانے والی قدیم ترین مخلوقات میں سے ایک ہے اور سمندر کی تہہ یعنی ہزاروں فٹ نیچے پائی جاتی ہیں۔ اتنی گہرائی میں موجودگی کی وجہ سے ان کے حوالے سے تحقیق بہت بڑا چیلنج ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں