دکھ شاعری ۔ عشق

‏اے خدا اس پہ گزرے نہ جو گزری مجھ پہ

اے خدا اسے پیش آئے نہ مکافات کا دکھ

__________________________________

غضب کا پیار تھا اُس کی اُداس آنکھوں میں

محسوس تک نہ ھوا کہ ملاقات آخری ہے

__________________________________

😍😍😍

جھلملاتی ہوئی نیند سن

اے چراغوں کی لو کی طرح
جھلملاتی ہوئی نیند، سن
میرا ادھڑا ہوا جسم بن
خواب سے جوڑ
لہروں میں ڈھال
اک تسلسل میں لا
نقش مربوط کر
نرم، ابریشمیں کیف سے
میری درزوں کو بھر
میری مٹی کے ذرے اٹھا
میری وحشت کے بکھرے ہوئے
سنگ ریزوں کو چن
اے چراغوں کی لو کی طرح
جھلملاتی ہوئی نیند، سن
میرا ادھڑا ہوا جسم بن
کوئی لوری دے
جھولا جھلا
پوٹلی کھول رمزوں کی
مجھ پر کہانی کی ابرک چھڑک
میرا کاندھا تھپک
آ مجھے تاج روئیدگی سے سجا
اک تسلسل میں لا
شب کے اک تار پر
چھیڑ دے کوئی دھن
اے چراغوں کی لو کی طرح
جھلملاتی ہوئی نیند، سن
میرا ادھڑا ہوا جسم بن!!
__________________________________

زندگی کی راہوں میں
کچھ مقام آتے ہیں
لوگ روٹھ جاتے ہیں
ساتھ چھوٹ جاتے ہیں
زندگی کے سب ہی پل
بے مراد لگتے ہیں
دن اداس لگتے ہیں
چار سو اندھیرا جب
خوب بڑھنے لگتا ہے
اور دل یہ کرتا ہے
زندگی کے یہ لمحے
اب تمام ہو جائیں
بہت جی لئے ہیں ہم
اب سکوں سے سو جائیں
تب کہیں سے اک تارا
نور کا ابھرتا ہے
مضطرب سے اس دل کو
پھر گماں گزرتا ہے
جس نے زندگی دی ہے
جس نے غم، خوشی دی ہے
اس کے لطف سے بڑھ کے
غم کیا ہم نے پائے ہیں ؟؟؟
گردش زمانہ سے
پھر کیوں تنگ آئے ہیں ؟
زندگی کی راہوں میں
شکر کی جو منزل کا
راستہ ملے تم کو
اس پہ مطمئن ہو کے
تم قدم بڑھاؤ تو
زندگی کا ہر لمحہ
رب کے نام کر ڈالو ❤

__________________________________

ﺳُﻨﻮ__
تـــم چھـــوڑ بھـــی جــاؤ
بچھـــڑ بھــی جــاؤ
ﻭﻋـــدہ ﺭﮨــــا ﺗُــــم ﺳﮯ___
تُمہیــــں ہم ﺩِﻝ ﻣﯿـــں ﺭﮐُﮭــــیں گے…..
ﮐـــہ ﺟﯿﺴـــے ﺳﯿپـــــ ﻣﯿـــں ، ﻣﻮتی
ﮐﮧ ﺟﯿﺴـــــے ﺧُﻮﺍبـــ ﻧﯿﻨﺪﻭﮞ ﻣﯿـــں
ﮐﮧ ﺟﯿﺴــــے ﭘُﮭﻮﻝ ﻣﯿـــں ﺧُﻮﺷﺒـــو
ﮐﮧ ﺟﯿﺴــــے ﻭﺭﻕ_ ﮐﺘﺎﺑــــوں ﻣﯿـــں
کــہ جیســـے پکیـــزہ رشتــــے دامــن میــں
ہمشــہ پاکـــ رکھــیں گـے
تیـــری یــادیں
تیـــری بــاتیــں
ہمشــہ ساتــھ رکھــیں گیے۔۔۔

__________________________________

ﺳُﻨﻮ__
تـــم چھـــوڑ بھـــی جــاؤ
بچھـــڑ بھــی جــاؤ
ﻭﻋـــدہ ﺭﮨــــا ﺗُــــم ﺳﮯ___
تُمہیــــں ہم ﺩِﻝ ﻣﯿـــں ﺭﮐُﮭــــیں گے…..
ﮐـــہ ﺟﯿﺴـــے ﺳﯿپـــــ ﻣﯿـــں ، ﻣﻮتی
ﮐﮧ ﺟﯿﺴـــــے ﺧُﻮﺍبـــ ﻧﯿﻨﺪﻭﮞ ﻣﯿـــں
ﮐﮧ ﺟﯿﺴــــے ﭘُﮭﻮﻝ ﻣﯿـــں ﺧُﻮﺷﺒـــو
ﮐﮧ ﺟﯿﺴــــے ﻭﺭﻕ_ ﮐﺘﺎﺑــــوں ﻣﯿـــں
کــہ جیســـے پکیـــزہ رشتــــے دامــن میــں
ہمشــہ پاکـــ رکھــیں گـے
تیـــری یــادیں
تیـــری بــاتیــں
ہمشــہ ساتــھ رکھــیں گیے۔۔۔

__________________________________

مری جاں تم خفا کیوں ہو؟
تمہیں مجھ سے گلہ کیا ہے؟
اچانک بے رخی اتنی۔۔
بتاؤ تو ہُوا کیا ہے؟
کسی نے تم سے کیا آخر
کہا ہے میرے بارے میں
کسی سے تم نے کیا آخر
سنا ہے میرے بارے میں
رہو بے شک خفا مجھ سے
مگر یہ بات سمجھا دو
مناؤں کب تلک تم کو
مجھے اتنا تو بتلا دو
اگر اب ہو سکے تم سے
تو یہ احسان فرما دو
میری منزل محبت ہے
مجھے منزل پہ پہنچا دو
تمہاری آنکھ میں آنسو
مجھے اچھے نہیں لگتے
تمہارے نرم ہونٹوں پر
گِلے اچھے نہیں لگتے
تمہارے مسکرانے پر
میرا دل مسکراتا ہے
تمہارے روٹھ جانے سے
میرا دل ٹوٹ جاتا ہے
تمہیں جو بے سبب مجھ سے
خفا ہونے کی عادت ہے
یہ آغازِ جدائی ہے
کہ اندازِ محبت ہے
وفا کے رنگ میں دیکھو
جفا اچھی نہیں ہوتی
کسی سے عشق میں اتنی
انا اچھی نہیں ہوتی
چلو اب مان بھی جاؤ
بہت اب ہو چکی رنجش
کسی دن اور کر لینا
یہ پوری اپنی تم خواہش۔۔۔

اگر آپ کو ہماری یہ کاوش پسند آئی اور آپ چاہتے ہیں  کہ مزید اسی طرح کی پوسٹس میں شاعری کو جمع کیا جائےتو ہمیں کمنٹس میں اطلاع کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.